Latest Pakistan News

سندھ اسمبلی، گٹگا، مین پوری کی تیاری فروخت پر پابندی کابل متعارف

0

سندھ اسمبلی، گٹگا، مین پوری کی تیاری فروخت پر پابندی کابل متعارف

کراچی (سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک)صوبہ سندھ میں گٹکا اور مین پوری کی تیاری و فروخت پر پابندی عائد کرنے کیلئے ایک بل سندھ اسمبلی میں متعارف کرا دیا گیا ۔ یہ بل پیپلز پارٹی کی خاتون رکن روبینہ سعادت قائم خانی کی طر ف سے پیش کیا گیا ۔ بل کی منظوری کی صو ر ت میں صوبے میں گٹکا اور مین پوری کی تیاری اور فروخت پر مکمل پابندی عائد ہو جائے گی ۔ روبینہ قائم خانی نے بل کے اغراض و مقاصد بیا ن کرتے ہوئے کہا بڑی تعداد میں بچے اور بڑے سب گٹکا اور مین پوری کے عادی ہو رہے ہیں ، جو انتہائی مضر صحت ہے ۔ ان عادی افراد کی تعداد میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے ۔ اس سے نہ صرف ان کی صحت خراب ہو رہی ہے بلکہ ان کی زندگیوں کو بھی خطرہ ہے کیونکہ گٹکا اور مین پوری سے کینسر بھی ہوتا ہے ۔ بل کے مطابق گٹکا اور مین پوری تیار اور فروخت کرنے والوں کیلئے سات سال قید کی سزا اور ایک لاکھ روپے روپے تک جرمانہ تجویز کیا گیا ہے۔ یہ جرم ناقابل ضمانت تصور ہوگا۔جبکہ اسمبلی میں وقفہ سوالات کے دوران وزیر منصوبہ بندی و ترقیات میر ہزار خان بجارانی نے کہا صوبائی محکمہ خزانہ کی طرف سے ترقیاتی سکیموں کیلئے بروقت فنڈزجاری نہ ہونے کی وجہ سے سکیموں کی تکمیل میں تاخیر ہو جاتی ہے ۔ متعدد ارکان نے اس بات پر تشویش کا اظہار کیا کہ پانچ چھ سال پرانی سکیمیں بھی اب تک مکمل نہیں ہو سکیں اور 6 سال پرانی سکیمیں بھی امسال کے ترقیاتی پروگرام میں شامل ہیں ۔ حکومت کو فیصلہ کرنا چاہئے یہ سکیمیں شروع کرنی ہیں یا انہیں ختم کرنا ہے ۔ ہما رے محکمے کا کام سکیمیں بنا کر دینا ہے ، ان کی منظوری اور فنڈز کے اجراء کا ہمارے محکمے سے کوئی تعلق نہیں ،انہوں نے اس بات سے اتفاق بھی کیا کہ سوالوں کے جوابات تاخیر سے ملتے ہیں اوراس سے سوال پوچھنے کا مقصد ختم ہو جاتا ہے ۔ سوالوں کے جوابات دینے کی ایک مدت مقرر ہونی چاہئے ۔ ڈپٹی اسپیکر سیدہ شہلا رضا میر ہزار خان بجارانی کو ’’ ریسکیو ‘‘ کرتی رہیں اور ارکان سے کہتی رہیں ان کے ضمنی سوالات غیر متعلق ہیں ، انہیں تازہ سوال جمع کرانا چاہئے ۔انکا کہنا تھا سندھ میں پلاننگ کمیشن کے قیام کا کوئی منصوبہ نہیں ، البتہ پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ بورڈ قائم کر دیا گیا ہے، محکمہ منصوبہ بندی و ترقیات میں 17 پلاننگ آفیسرز اور 3 ڈپٹی ڈائریکٹرز بھرتی کیے گئے ۔ دریں اثناء سندھ اسمبلی میں گنے کی قیمت مقرر اور شوگر ملز میں کرشنگ شروع کرنے کے حوالے سے تحریک التواء خلاف ضابطہ قرار دیدی گئی جبکہ اسی معاملے پر قرار داد منظور کر لی گئی ۔ یہ تحریک التواء مسلم لیگ (فنکشنل) کی رکن نصرت سحر عباسی نے پیش کی تھی ، جس میں کہا گیا حکومت شوگر ملز میں کر شنگ شروع کرانے اور گنے کے سرکاری نرخ مقرر کرنے میں تاخیر کر رہی ہے ۔ سندھ کے سینئر وزیر خوراک و پارلیمانی امور نثار احمد کھوڑو نے تحریک التواء کی مخالفت کی اور کہا سندھ اسمبلی کے رواں اجلاس میں معاملے پر بات ہو چکی ہے اور حکومت یقین دہانی کرا چکی ہے کہ یہ مسئلہ جلد حل کر لیا جائے گا ۔جس پر ڈپٹی اسپیکر نے تحریک التواء کو خلاف ضابطہ قرار دیدیا، اس پر اپوزیشن ارکان نے زبردست احتجاج اور شور شرابہ کیا ۔ بعد ازاں نجی قرار دادوں کے وقفے کے دوران پاکستان مسلم لیگ (فنکشنل) کے رکن سعید خان نظامانی نے اسی معاملے پر قرار داد پیش کی ،جس پر وزیر اطلاعات ناصر حسین شاہ اپوزیشن پر برس پڑے اور کہامسلم لیگ (فنکشنل) والے وفاقی کابینہ میں بیٹھے ہیں ۔ وہاں چینی کی قیمتوں کے معاملے پر وہ بات کیوں نہیں کرتے ، وہاں ان لوگوں کو سانپ سونگ جاتا ہے ۔ اپوزیشن لیڈر خواجہ اظہار الحسن نے کہا ہر سال یہ مسئلہ ہوتا ہے ، حکومت قرا رداد کی مخالفت نہ کرے بلکہ حمایت کرے ۔ بعد میں قرار داد کے متن میں تبدیلی کرکے اسے اتفاق رائے سے منظور کر لیا گیا ۔

سندھ اسمبلی، گٹگا، مین پوری کی تیاری فروخت پر پابندی کابل متعارف | TheMeanBlog

You might also like

Leave a Reply